Sir Dekh ke Shabbir Ka Lyrics | Syed Raza Abbas Zaidi

Sir Dekh ke Shabbir Ka Shereen Ne Pukara | Syed Raza Abbas Zaidi | Imam Hussain Noha – Syed Raza Abbas Zaidi Lyrics

Noha Khwan: Syed Raza Abbas Zaidi

جب شیریں کے گھر قافلہ شبیرؑ کا آیا

زینبؑ سے کہا کون ھو بتلاؤ ضعیفہ
ھمشیر ھوں شبیرؑ کی زینبؑ نے پکارا
ملنے کیلئے آئے ھیں تجھسے تیرے مولاؑ

سر دیکھ کے شبیرؑ کا شیریں نے پکارا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

وعدہ جو کیا آپ نے میں بھول نا پائی
اِس گھر میں وہ گھر چھوڑ کے جس دن سے ھوں آئی
تکتی ھوں اُسی روز سے میں آپکا رستہ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

وہ باتیں رلاتی ہیں جویثرب میں ہوئیں تھیں
اب آیا سمجھ آپ نےکیوں چادریں دیں تھیں
بے پردہ نبیؐ زادیاں ھیں ساتھ میں مولاؑ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

آباد یہ گھر دیکھکے چین آتا تھا مجھکو
یہ کسکی نظر کھاگئی بتلائیے کچھ تو
اُجڑا ھوا گھر دیکھکے دل روتا ھے میرا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

اکبرؑ کی ولادت کا سنا جسگھڑی میں نے
بس میں جو میرے ھوتا میں آجاتی مدینے
مل پائی نا اکبرؑ سے یہ افسوس رھیگا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

دو سال کے سجادؑ تھے بھولی نہیں شیریں
پھپیاں جو کبھی آئیں تو آنکھیں نہیں کھولیں
بےپردہ ھوئیں پھپیاں تو کسطرح سے دیکھا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

بائیس برس شیریں نے کسطرح گزارے
دن رات اسی سوچ میں کٹتے تھے ھمارے
اک روز ضرور آئینگے مولاؑ کا ھے وعدہ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

سنتی تھی کے اِک آپکی بیٹی ھے سکینہؑ
سوچا تھا کے ساتھ آئیگی جب آئینگے آقا
جسطرح سے وہ آئی ھے دیکھا نہیں جاتا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

مقتل میں بھلا آپ پہ کیا ظلم ھوئے ھیں
وہ بال میرے سامنے مٹی میں اٹے ھیں
جن بالوں کو خود فاطمہ زھراؑ نے سنوارا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

ماتھے کا لہو آپکی آنکھوں میں بھرا ھے
چوما تھا محمدؐ نے جو وہ خشک گلا ھے
ھے ریشِ مبارک میں لہو آپکی مولاؑ
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

زیشان و رضا کہتی تھی شیریں یہی روکے
اے کاش میں مرجاتی یہ دن آنے سے پہلے
ھے آپکا سر آج میرے سامنے رکھا
آپ آئینگے اِس حال میں سوچا ھی نہیں تھا

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top